پاکستان اور کوریا کے درمیان تقریباً 2 کروڑ ڈالر قرض موخر کرنے کا معاہدہ

273

لاہور: حکومت پاکستان نے 15 مئی کو جنوبی کوریا کے ساتھ  ایک کروڑ 90 لاکھ ڈالر سے زائد کے قرضے موخر کرنے کے معاہدے پر دستخط کر دیے۔ یہ معاہدہ جی 20 ڈیبٹ سروس سسپنشن انیشی ایٹو (DSSI) فریم ورک کے تحت عمل میں لایا گیا ہے۔

وزارت اقتصادی امور کی طرف سے جاری کردہ بیان کے مطابق جو رقم ابتدائی طور پر جولائی اور دسمبر 2021ء کے درمیان ادا کی جانی تھی، اب چھ سال کی مدت (بشمول ایک سال کی رعایتی مدت) میں نیم سالانہ اقساط میں ادا کی جائے گی۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ پاکستان کے ترقیاتی شراکت داروں کی طرف سے دی گئی حمایت کی وجہ سے جی 20 ڈی ایس ایس آئی نے وہ مالی رعایت فراہم کی ہے جو اسلامی جمہوریہ پاکستان کی فوری معاشی ضروریات سے نمٹنے کے لیے ضروری تھی۔

وزارت نے بتایا کہ قرض کی کل رقم، جو مئی 2020 سے دسمبر 2021 تک کی ادائیگی کی مدت کا احاطہ کرنے والے ڈی ایس ایس آئی فریم ورک کے تحت معطل کی جانی ہے، 3 ارب 68 کروڑ 60 لاکھ ڈالر ہے۔

وزارتِ اقتصادی امور کے مطابق پاکستان پہلے ہی مذکورہ فریم ورک کے تحت اپنے قرضوں کی ادائیگیوں کو موخر کرنے کے لیے 21 دو طرفہ قرض دہندگان کے ساتھ 104 معاہدوں پر دستخط کر چکا ہے۔ ان قرضوں کی مجموعی مالیت 3 ارب 63 کروڑ 30 لاکھ ڈالر بنتی ہے۔ یہ بھی بتایا گیا ہے کہ جی 20 ڈی ایس ایس آئی کے تحت دستخط کیے جانے والے بقیہ معاہدوں کے لیے بات چیت جاری ہے۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here