سفید ترین پینٹ دریافت، ائیرکنڈیشر کی ضرورت ختم کر دے گا

یہ سفید ترین روغن 98.1 فیصد تک سورج کی روشنی کو منعکس کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے، رپورٹ

152

نیویارک: امریکا میں محققین نے دنیا کا سب سے زیادہ سفید روغن دریافت کرنے کا اعلان کیا ہے جس کے بارے میں توقع ہے کہ یہ عالمی حدت سے نمٹنے میں مدد گار ثابت ہو گا۔

برطانوی اخبار ڈیلی میل کی رپورٹ کے مطابق مذکورہ سفید ترین روغن 98.1 فیصد تک سورج کی روشنی کو منعکس کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ یہ تناسب بازار میں موجود بہترین روغنوں سے تقریباََ 8 فیصد زیادہ ہے، اس روغن کو انڈیانا میں بورڈو یونیورسٹی میں تیار کیا گیا ہے۔

بورڈو یونیورسٹی کے محققین کی ٹیم کے مطابق یہ نیا روغن گرم ماحول والے علاقوں میں عمارت کو زیادہ مؤثر طور پر ٹھنڈا رکھے گا، اس طرح ایئرکنڈیشننگ ٹکنالوجی کی ضرورت کم ہو جائے گی، اس روغن میں بیریم سلفیٹ نامی ایک کیمیائی مرکب شامل کیا گیا ہے۔

دراصل اس روغن کو انتہائی سفیدی دینے والے دو عوامل ہیں۔ پہلا یہ کہ روغن میں کیمیائی مرکب بیریم سلفیٹ کا ارتکاز کافی زیادہ رکھا گیا ہے۔ دوسرا یہ کہ روغن میں بیریم سلفیٹ کے تمام ذرات مختلف حجم کے ہیں۔

بورڈو یونیورسٹی میں میکینیکل انجینئرنگ کے استاد پروفیسر شیولن روان کہتے ہیں کہ اگر آپ اس روغن کو تقریبا 90 مربع میٹر ایریا کی چھت پر استعمال کر رہے ہیں تو اس سے 10 کلو واٹ تک کی کولنگ پاور حاصل کی جا سکتی ہے۔ یہ توانائی ان سینٹرلائزڈ ایئرکنڈیشنرز سے زیادہ طاقت ور ہے جو اس وقت زیادہ تر گھروں میں استعمال ہو رہے ہیں۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here