کورونا وائرس کے بڑھتے کیسز کے پیش نظر تعلیمی اداروں کی بندش میں توسیع

اسلام آباد سمیت پنجاب کے 9 اضلاع میں تعلیمی ادارے 11 اپریل تک بند رہیں گے، نویں، دسویں، گیارہویں اور بارہویں کے امتحانات شیڈول کے مطابق ہوں گے: وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود

165

اسلام آباد: وفاقی وزیر برائے تعلیم و پیشہ وارانہ تربیت شفقت محمود نے کہا ہے کہ دارالحکومت اسلام آباد اور پنجاب کے 9 اضلاع میں 11 اپریل تک تعلیمی ادارے بند رہیں گے۔

نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشنز سنٹر (این سی او سی) میں صوبائی وزرائے تعلیم کے ساتھ اجلاس کے بعد میڈیا بریفنگ میں وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود کا کہنا تھا کہ اجلاس میں متفقہ طور پر فیصلہ کیا گیا ہے کہ جن شہروں میں تعلیمی اداروں کو کورونا وائرس کے پیش نظر بند کیا گیا تھا وہ اب 11 اپریل تک بند رہیں۔

انہوں نے کہا کہ مذکورہ اضلاع کے علاوہ اگر کسی ضلع میں کورونا کیسز میں اضافہ ہوتا ہے تو وہ صوبائی حکومت کی صوابدید ہو گی۔

شفقت محمود نے کہا کہ این سی او سی کے اجلاس میں بورڈز کے امتحانات کے حوالے سے بھی یہ فیصلہ کیا گیا ہے کہ نویں، دسویں، گیارہویں اور بارہویں جماعت کے امتحانات صوبائی حکومتوں اور بورڈز کے اعلان کردہ شیڈول کے مطابق ہوں گے۔

انہوں نے کہا کہ ہم وبا کی صورت حال کا جائزہ لیتے رہیں گے، ہمیں اس بات کا مکمل ادراک ہے کہ بچوں کی تعلیم کا نقصان ہو رہا ہے لیکن بچوں کی صحت اولین ترجیح ہے۔

وزیر تعلیم نے کہا کہ ملک بھر میں جن اضلاع اور شہروں میں تعلیمی ادارے بند کئے جائیں گے اس کا فیصلہ صوبائی حکومتیں، آزاد کشمیر اور گلگت بلتستان کی حکومت خود کرے گی۔

شفقت محمود نے کہا کہ پہلے 15 مارچ سے 28 مارچ تک تعلیمی اداروں کو بند رکھنے کا فیصلہ کیا تھا تاہم آج ہونے والے اجلاس میں تمام عوامل کا جائزہ لینے کے بعد فیصلہ کیا گیا کہ تعلیمی ادارے 11 اپریل تک بند رہیں گے اور ان مخصوص اضلاع کے علاوہ دیگر علاقوں کو بھی شامل کیا جا سکتا ہے۔

قبل ازیں وفاقی وزیر برائے تعلیم و پیشہ وارانہ تربیت شفقت محمود کی سربراہی میں کورونا کی صورت حال کا جائزہ لینے کے لیے اہم اجلاس نیشنل کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹر (این سی او سی) میں ہوا۔

اجلاس میں چاروں صوبوں کے وزرائے تعلیم و صحت، گلگت بلتستان، آزاد جموں و کشمیر کے وزراء اور اعلیٰ حکام شریک ہوئے۔ اجلاس میں وفاقی سیکریٹری تعلیم فرح حامد خان، پارلیمانی سیکرٹری تعلیم وجیہہ قمر اور چیئرمین ایچ ای سی بھی شریک ہوئے۔ صوبائی وزرائے تعلیم ویڈو لنک کے ذریعے اجلاس میں شریک ہوئے۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here