امریکا کا جہازوں کے پرزہ جات سمیت یورپی یونین کی مخصوص مصنوعات پر ٹیرف بڑھانے کا فیصلہ

238

واشنگٹن: امریکی حکومت نے کہا ہے کہ وہ اقوامِ متحدہ بالخصوص فرانس اور جرمنی کے ساتھ جہازوں کے پرزہ جات سمیت کچھ مصنوعات اور وائنز کے ٹیرف میں اضافہ کرے گی۔ 

واشنگٹن اور برسلز کے درمیان جہازوں کی سبسڈیز پر 16 سال سے تناؤ جاری ہے لیکن امریکہ کے اس فیصلے کے بعد اب اس تنازعے میں ایک نیا رخ آگیا ہے۔

یو ایس ٹی آر (US Trade Representative) کے آفس نے ایک بیان میں کہا ہے کہ وہ جہازوں کی تیاری کے پرزہ جات اور فرانس اور جرمنی کی تیارہ کردہ وائنز پروڈکٹس کے علاوہ کوگناکس اور دیگر برانڈیز کے ٹیرف میں اضافہ کر رہی ہے۔

یو ایس ٹی آر نے یہ نہیں بتایا کہ ٹیرف میں کب سے اضافہ کیا جائے گا لیکن یہ کہا گیا کہ کچھ روز تک مزید تفصیلات جاری کر دی جائیں گی۔

امریکہ کا یہ اقدام اس وقت سامنے آیا جب امریکہ اور یورپین یونین کے درمیان امریکی حکومت کی یورپ کی ائیربس ایس ای کو امداد دینے کے طویل تنازعے کو ختم کرنے کے لیے مذاکرات جاری تھے، جہازساز کمپنی بوئنگ کارپوریشن کو برطانیہ، فرانس، جرمنی اور اسپین کی حمایت سے امریکی امداد کی جارہی تھی۔

یو ایس ٹی آر نے کہا ہے کہ یورپین یونین نے ستمبر میں ہونے والے ورلڈ ٹریڈ آرگنائزیشن کے اجلاس میں امریکہ اور یورپ کے درمیان جاری تنازعے کے ذریعے غیرمنصفانہ طور پر امریکہ کے خلاف ٹیرف کا حساب کتاب کیا۔

یو ایس ٹی آر کے اس اقدام پر اقوامِ متحدہ اور ائیربس کی جانب سے ابھی کسی قسم کا بیان جاری نہیں کیا گیا۔

یو ایس وائن ٹریڈ الائنس کے صدر بین اینف (Ben Aneff) نے کہا ہے کہ یہ اقدام امریکی کمپنیوں کے لیے مزید مشکلات کا باعث بنے گا جو پہلے ہی گزشتہ ٹیرف کے باعث مشکلات سے دوچار ہیں، صدر ٹریڈ الائنس نے نومنتخب امریکی صد جوبائیڈن سے جلد اس اقدام کو واپس لینے کی درخواست کی ہے۔

انہوں نے کہا کہ “یہ اقدام امریکی کمپنیوں کے لیے ایک دھچکا ہے۔ امریکی ریستورانٹس اور چھوٹے کاروبار پہلے ہی دیوالیے سے بچنے کے لیے جدوجہد کر رہے ہیں، یہ فیصلہ نہ صرف مزید نوکریاں ختم کرے گا بلکہ مذاکرات کے دروازے بھی بند کرے گا”۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here