وزیر اعظم کی زرعی شعبہ کی بہتری، پیداوار میں اضافہ کیلئے ایکشن پلان پیش کرنے کی ہدایت

زرعی اجناس کی پراسیسنگ کیلئے خصوصی اقتصادی زونز پر توجہ دینے، چین کے تجربے سے استفادہ کرنے اور ایگرو ایکولوجیکل زونز کو ازسرنو مرتب کرنے کی بھی ہدایت

97

اسلام آباد: وزیرِاعظم عمران خان نے کہا ہے کہ فوڈ سکیورٹی کو یقینی بنانا اولین ترجیح ہے، زرعی شعبہ کی بہتری، پیداوار میں اضافہ اور شعبہ کو جدید خطوط پر استوار کرنے کیلئے ایکشن پلان پیش کیا جائے۔

بدھ کو زرعی شعبے میں اصلاحات خصوصاً پیداوار میں اضافہ اور فوڈ سیکیورٹی کے چیلنجز سے نمٹنے کے لئے اٹھائے جانے والے اقدامات کے حوالے سے جائزہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ زرعی شعبہ کی بہتری، پیداوار میں اضافہ اور شعبہ کو جدید خطوط پر استوار کرنے کے حوالہ سے مرتب کئے جانے والے مختصر اور طویل المدتی منصوبوں کے حوالے سے ٹائم لائنز پر مبنی ایکشن پلان پیش کیا جائے۔

اجلاس میں وزیر برائے فوڈ سیکیورٹی سیّد فخر امام، وزیرِ اطلاعات و نشریات سینیٹر شبلی فراز، معاون خصوصی ڈاکٹر شہباز گل، سیکرٹری نیشنل فوڈ سکیورٹی عمر حمید خان اور زرعی شعبہ سے تعلق رکھنے والے متعلقہ افسران نے شرکت کی۔

اجلاس کے دوران ملک کی بڑھتی ہوئی آبادی کے پیش نظر فوڈ سیکیورٹی کے حوالے سے درپیش چیلنجز، مختلف زرعی اجناس کی پیداوار کی موجودہ صورتحال، وزیرِاعظم ایگریکلچر ایمرجنسی پروگرام پر پیش رفت ، مختلف اجناس کی پیداوار بڑھانے اور زرعی شعبے کو جدید خطوط پر استوار کرنے کے حوالے سے تفصیلی بریفنگ دی گئی۔

وزیرِاعظم نے مختلف اجناس کی پیداوار کے تخمینوں کے حوالے سے درست، مستند اور قابل بھروسہ ڈیٹا کے حوالے سے ہدایت کی کہ تمام صوبائی حکومتوں اور متعلقہ محکموں کی معاونت سے وزارت فوڈ سکیورٹی میں نیشنل فوڈ سکیورٹی ڈیش بورڈ فعال کرنے کے عمل کو تیز کیا جائے۔

عمران خان نے زور دیا کہ تمام سٹیک ہولڈرز بشمول تحقیقی مراکز، یونیورسٹیوں اور دیگر متعلقہ اداروں کے درمیان رابطہ کاری کو مزید مستحکم اور اس حوالہ سے مربوط نظام تشکیل دیا جائے۔

وزیرِاعظم نے ہدایت کی کہ زرعی اجناس کی پراسیسنگ کے حوالے سے خصوصی اقتصادی زونز پر خاص توجہ دی جائے، زرعی اجناس میں پیداواری اضافہ اور زرعی شعبہ کو جدید خطوط پر استوار کرنے کے حوالہ سے وزیرِاعظم نے چین کے تجربے سے استفادہ کرنے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ چین کی مہارت اور تعاون کا بھرپور استعمال یقینی بنایا جائے۔

وزیرِاعظم نے ایگرو ایکولوجیکل زونز کو ازسرنو مرتب کرنے کی بھی ہدایت کی، انہوں نے کہا کہ زیتون، دالوں وغیرہ جیسی اجناس جن کی ضروریات درآمد کے ذریعے پوری کی جاتی ہیں، کسانوں کو ایسی اجناس کی طرف راغب کیا جائے اور اس ضمن میں ان کو تمام مطلوبہ معاونت فراہم کی جائے۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here