دال روٹی بھی عوام کی پہنچ سے باہر، ایک ہفتے میں 17 اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں اضافہ

158

اسلام آباد: ملک بھر میں مہنگائی کے نہ تھمنے والے طوفان کی وجہ سے اشیائے ضروریہ کی قیمتیں آسمان سے باتیں کرنے لگی ہیں اور عوام دال روٹی کو بھی ترسنے لگے ہیں۔

پاکستان بیورو برائے شماریات (پی بی ایس) کے اعدادوشمار کے مطابق 2 ستمبر 2021ء کو ختم ہونے والے ہفتہ میں مشترکہ آمدنی رکھنے والے گروپ کیلئے قیمتوں کے حساس اشاریہ میں 0.67 فیصد کا اضافہ ہوا۔

ہفتہ رفتہ میں روزمرہ استعمال کی 8 ضروری اشیا کی قیمتوں میں کمی، 17 اشیا کی قیمتوں میں اضافہ اور 26 کی قیمتوں میں استحکام رہا۔

گزشتہ ہفتہ میں کیلا کی قیمت میں 5.35 فیصد، ایل پی جی 2.74 فیصد، ٹماٹر 1.57 فیصد، دال مونگ 1.43 فیصد، ڈیزل 1.32 فیصد، پیٹرول 1.25 فیصد، آلو 0.55 فیصد اور ٹوٹا باسمتی چاول کی قیمت میں 0.39 فیصد کی کمی ریکارڈ کی گئی۔

اس کے برعکس مرغی کی قیمت میں 13.17 فیصد، پیاز 6.64 فیصد، لہسن 5.37 فیصد، دال مسور 4.20 فیصد، انڈے 3.23 فیصد، آٹا 2.39 فیصد، تیار چائے 1.72 فیصد اور چینی کی قیمت میں 1.67 فیصد کا اضافہ ہوا۔

سب سے کم یعنی 17 ہزار 732 روپے ماہوار آمدنی رکھنے والے گروپ کیلئے افراط زر کی شرح میں 0.76 فیصد کمی ریکارڈ کی گئی۔

17 ہزار 733 روپے سے لے کر 22 ہزار 888 روپے  ماہوار آمدنی والے گروپ کیلئے قیمتوں کے حساس اعشاریہ میں 0.80 فیصد، 22 ہزار 889 روپے سے 29 ہزار 517 روپے ماہوار آمدن والے گروپ کیلئے 0.76 فیصد اضافہ ہوا۔

اسی طرح 29 ہزار 518 روپے سے لے کر 44 ہزار 175 روپے ماہوار آمدن والے گروپ کیلئے قیمتوں کے حساس اعشاریہ میں 0.74 فیصد جبکہ 44 ہزار 176 اور اس سے زائد ماہوار آمدنی رکھنے والے گروپ کیلئے قیمتوں کے حساس اشاریہ میں 0.63 فیصد اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔

ہفتہ رفتہ میں گزشتہ سال کی اسی مدت کے مقابلہ میں آلو کی قیمت میں 28.01 فیصد، ٹماٹر 27.42 فیصد اور دال مونگ کی قیمت 20.39 فیصد کمی ریکارڈ کی گئی۔

واضح رہے کہ صارفین کیلئے قیمتوں کے حساس اشاریہ کا تعین ملک کے 17 بڑے شہروں کی 50 مارکیٹوں میں 51 ضروری اشیاء کی قیمتوں کی بنیاد پر کیا جاتا ہے۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here