رواں سال چین کی پاکستان میں سرمایہ کاری میں 32  فیصد کمی ریکارڈ

جولائی 2020ء سے مارچ 2021ء کے دوران پاکستان میں براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری میں 35 فیصد کمی ، حجم ایک ارب 40 کروڑ ڈالر رہا، گزشتہ سال ایف ڈی آئی کا حجم دو ارب 15 کروڑ ڈالر تھا

161

اسلام آباد: پاکستان میں چین اور ہانگ کانگ کی سرمایہ کاری میں جاری مالی سال کے دوران کمی ریکارڈ کی گئی ہے۔

سٹیٹ بینک آف پاکستان (ایس بی پی) اور سرمایہ کاری بورڈ کے اعدادوشمار کے مطابق جاری مالی سال کی ابتدائی تین سہ ماہیوں (جولائی تا مارچ) کے دوران چین کی جانب سے پاکستان میں سرمایہ کاری میں گزشتہ مالی سال کی اسی مدت کے مقابلے میں 32.18 فیصد کمی ہوئی ہے۔

جولائی 2020ء سے لے کر مارچ 2021ء کے دوران چین کی جانب سے پاکستان میں سرمایہ کاری کا حجم 64 کروڑ 99 ہزار ڈالر رہا جس میں 65 کروڑ 8 ہزار ڈالر کی براہ راست سرمایہ کاری جبکہ منفی ایک ملین ڈالر کی پورٹ فولیو سرمایہ کاری شامل ہے۔

گزشتہ مالی سال کی پہلی تین سہ ماہیوں کے دوران چین نے پاکستان میں 85 کروڑ 91 لاکھ ڈالر کی سرمایہ کاری کی جس میں سے 85 کروڑ 93 لاکھ ڈالر کی براہ راست سرمایہ کاری اور منفی 0.2 ملین ڈالر پورٹ فولیو سرمایہ کاری شامل ہے۔

مارچ 2021ء میں چین کی جانب سے پاکستان میں سرمایہ کاری کا حجم 12 کروڑ 57 لاکھ ڈالر ریکارڈ کیا گیا۔

سٹیٹ بینک اور سرمایہ کاری بورڈ کے مطابق مالی سال کی پہلی تین سہ ماہیوں میں ہانگ کانگ کی جانب سے پاکستان میں 11 کروڑ 27 لاکھ ڈالر کی سرمایہ کاری کی گئی جس میں 10 کروڑ 57 لاکھ ڈالر براہ راست سرمایہ کاری اور70 لاکھ ڈالر پورٹ فولیو سرمایہ کاری شامل ہے۔

یہ شرح گزشتہ مالی سال کے ابتدائی 9 ماہ کے مقابلہ میں 43.12 فیصد زیادہ ہے،  گزشتہ مالی سال کی اسی مدت میں پاکستان میں ہانگ کانگ کی سرمایہ کاری کا حجم 16 کروڑ 13 لاکھ ڈالر ریکارڈ کیا گیا تھا۔

سٹیٹ بینک کے اعدادوشمار کے مطابق جاری مالی سال  کے ابتدائی 9 ماہ (جولائی تا مارچ) کے دوران پاکستان میں براہ راست غیر ملکی سرمایہ کاری (ایف ڈی آئی) سالانہ 35 فیصد کمی  ہوئی اور اس کا حجم ایک ارب 40 کروڑ ڈالر ریکارڈ کیا گیا جبکہ مالی سال کے پہلے 9 ماہ کے دوران ایف ڈی آئی کا حجم دو ارب 15 کروڑ ڈالر تھا۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here