’500 سے زائد جاپانی آئی ٹی کمپنیاں پاکستان آنا چاہتی ہیں‘

766

اسلام آباد: 2030ء تک جاپان کو آٹھ لاکھ آئی ٹی انجینئرز کی ضرورت ہو گی، کووڈ-19 کی وباء کے بعد 500 سے زائد جاپانی آئی ٹی کمپنیاں پاکستان آنا چاہتی ہیں۔

گزشتہ روز پاکستان میں تعینات جاپانی سفیر کننوری مٹسوڈا نے معاون خصوصی برائے اوورسیز پاکستانیز ذولفقار بخاری سے ملاقات کی جس کے بعد زلفی بخاری نے جاپانی آئی ٹی کمپنیز کی ایسوسی ایشن سے ویڈیو کانفرنس سے بھی خطاب کیا جس میں وزارت خارجہ، وزارت انفارمیشن ٹیکنالوجی، پاکستان سافٹ ویئر ہاؤس ایسوسی ایشن اور دونوں ممالک کے سفارتی نمائندگان نے خصوصی شرکت کی۔

یہ بھی پڑھیے: 

پاکستان کو کورونا کے خلاف اقدامات کیلئے جاپان ڈیڑھ ارب روپے امداد دے گا

سویڈش کمپنیوں کو پاکستانی آئی ٹی سیکٹر میں سرمایہ کاری کی دعوت

آئندہ 10 سالوں میں پاکستان کی آئی ٹی برآمدات 10 ارب ڈالر تک بڑھنے کا امکان

پاکستانی آئی ٹی کمپنی فوربز ایشیا کی 200 بہترین کمپنیوں کی فہرست میں شامل

پاکستان کی ہواوے سمیت دیگر عالمی کمپنیوں کو آئی ٹی سیکٹر میں شراکت داری کی دعوت

اس موقع پر جاپان میں تعینات پاکستانی سفیر کا کہنا تھا کہ پاک جاپان سکلڈ ورک فورس معاہدے کے بعد این ای سی، میک، سینکیو، اورکس سمیت جاپان کی ایک سو سے زائد بڑی آئی ٹی کمپنیوں نے پاکستانی سفارت خانے سے رابطہ کیا ہے۔

جاپان آئی ٹی ایسوسی ایشن کا کہنا تھا کہ جاپان میں آئی ٹی انجینئرز کی قلت شدت اختیار کر رہی ہے، جاپان کی وزارت تجارت اور صنحت کے مطابق 2030ء تک جاپان کو آٹھ لاکھ آئی ٹی انجینئرز کی کمی کا سامنا کرنا پڑے گا، کووڈ کے بعد 500 سے زائد جاپانی آئی ٹی کمپنیاں پاکستان آنا چاہتی ہیں۔

اجلاس کے دوران معاون خصوصی برائے اوورسیز پاکستانیز زلفی بخاری نے کہا کہ ان کی وزارت کے نئے وژن کے تحت 2021ء میں پاکستانی افرادی قوت کی ایکسپورٹ کا دائرہ کار وسیع کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ماضی میں صرف خلیجی ممالک پر توجہ دی گئی، ساؤتھ کوریا، رومانیہ، جرمنی اور جاپان کے ساتھ ہنرمند افرادی قوت بڑھانے کے لئے مسلسل رابطے میں ہیں، جاپان میں افرادی قوت بھیجنا اس وقت ہماری اولین ترجیح ہے۔

زلفی بخاری نے کہا کہ اگلے سال کے شروع میں جاپان کا ایک اہم دورہ کروں گا، 2021ء میں پاک جاپان تعلقات کا ایک نیا باب شروع ہو گا۔ پرامید ہوں کہ 2021ء میں جاپان میں پاکستانی آئی ٹی انجینئرز کے لئے راہ ہموار ہو جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ جاپانی آئی ٹی کمپنیاں پاکستان میں تربیتی مراکز بھی قائم کرنا چاہتی ہیں جو حوصلہ افزا بات ہے، پاکستان میں پاک جاپان آئی ٹی کانفرنس کا بھی انعقاد کریں گے، خلیجی ممالک کے بعد جاپان پاکستانیوں کے لئے دوسری بڑی مارکیٹ بنے گی، اسی کو مدنظر رکھتے ہوئے جاپان میں پہلی دفعہ کمیونٹی ویلفیئر اتاشی بھی بھیج رہے ہیں۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here