جنسی جرائم کے مجرموں کے تیز ترین ٹرائل کیلئے آرڈیننس منظور

کرائسس سیل چھ گھنٹے کے اندر متاثرہ فرد کا طبی معائنہ کرائے گا، خصوصی عدالتیں چار ماہ میں مقدمہ نمٹائیں گے، متاثرین کی شناخت ظاہر کرنے پر پاپبندی ہو گی

204

اسلام آباد: صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے انسدادِ ریپ آرڈیننس 2020ء کی منظوری دے دی۔

منگل کو ایوان صدر کے میڈیا ونگ سے جاری بیان کے مطابق آرڈیننس سے عورتوں اور بچوں کے خلاف جنسی زیادتی کے معاملات کو جلد نمٹانے میں مدد ملے گی۔

جنسی زیادتی کے ملزمان کے تیز ٹرائل اور کیسز جلد از جلد نمٹانے کیلئے ملک بھر میں خصوصی عدالتوں کا قیام عمل میں لایا جائے گا جو چار ماہ کے اندر جنسی زیادتی کے کیسز کو نمٹائیں گی۔

آرڈیننس کے تحت وزیرِاعظم انسدادِ جنسی زیادتی کرائسس سیلز کا قیام عمل میں لائیں گے جو چھ گھنٹے کے اندر اندر میڈیکولیگل معائنہ کرانے کا مجاز ہو گا۔

نادرا کی مدد سے قومی سطح پر جنسی زیادتی کے مجرمان کا رجسٹر تیار کیا جائے گا، آرڈیننس کے تحت جنسی زیادتی کے متاثرین کی شناخت ظاہر کرنے پر پابندی اور قابلِ سزا جرم قراردیا ہے۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here