’کرپشن اور منشیات کا پیسہ سیاست میں استعمال ہوا‘

وزیراعظم عمران خان کا اینٹی نارکوٹکس فورس (اے این ایف) کے ہیڈ کوارٹرز کا دورہ، نئی عمارت کا افتتاح، یادگارِ شہداء پر حاضری

337
وزیراعظم عمران خان اے این ایف ہیڈ کوارٹرز کی نئی عمارت کے افتتاح کے بعد تقریب سے خطاب کر رہے ہیں (فوٹو: پی آئی ڈی)

راولپنڈی: وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ نشے کے کینسر کے خلاف ملک بھر میں تحریک چلائی جائے گی اور نئی نسل کو بچانے کے لئے معاشرے کو مل کر منشیات، جرائم اور کرپشن سے لڑنا ہے۔

سوموار کو وزیراعظم نے اینٹی نارکوٹکس فورس (اے این ایف) کے ہیڈ کوارٹرز کا دورہ کر کے نئی عمارت کا افتتاح کیا، جس کے بعد تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ افغان جہاد کے بعد ملک میں منشیات کی لعنت در آئی، اس مسئلہ کو سنجیدگی سے نہیں لیا گیا کیونکہ خیال یہ تھا کہ اس سے پاکستان کا نقصان نہیں ہو رہا لیکن جس چیز کو قرآن نے برا کہا ہے وہ معاشرے کو نقصان پہنچاتی ہے۔

ڈی جی اینٹی نارکوٹکس فورس میجر جنرل محمد عارف ملک وزیراعظم عمران خان کو ادارے کے آپریشنز پر بریفنگ دے رہے ہیں (فوٹو: پی آئی ڈی)

انہوں نے کہا کہ منشیات سے پیسہ بنانے والوں کو معاشرے میں برا نہیں سمجھا جاتا تھا اور وہ لوگ قابل قبول تھے، یہ بدقسمتی تھی، ناجائز طریقوں، کرپشن اور منشیات سے حاصل ہونے والے پیسے نے پاکستان کو نقصان پہنچایا۔ یہ پیسہ سیاست اور کرپشن کو فروغ دینے کے لئے استعمال ہوا۔

وزیراعظم نے کہا کہ ملک میں 70 لاکھ نوجوانوں کا نشے کا عادی ہونا انتہائی قابل تشویش ہے، یہ اتنی بڑی تعداد ہے کہ نیوزی لینڈ اور سنگاپور سمیت کئی ممالک کی آبادی بھی اس سے کم ہے۔

انہوں نے کہا کہ ایک گھر میں جب کوئی شخص منشیات میں مبتلا ہو جاتا ہے تو اس کی وجہ سے ناصرف وہ خود بلکہ اس کا پورا گھرانہ تباہ ہو جاتا ہے۔ نشے کی وجہ سے ہی لوگ اپنے بیوی بچوں تک کو نقصان پہنچاتے ہیں اور اپنے خاندانوں کو تباہ و برباد کر دیتے ہیں۔

وزیراعظم عمران خان اینٹی نارکوٹکس فورس کے ہیڈ کوارٹرز کیلئے نئی عمارت کا افتتاح کر رہے ہیں (فوٹو: پی آئی ڈی)

عمران خان نے کہا کہ معاشرے میں منشیات کا کینسر تیزی سے پھیل رہا ہے، سنتھیٹک ڈرگز منشیات کی نئی شکل ہے جو سکولوں اور تعلیمی اداروں میں بھی پھیل چکی ہے۔ ایسے بچے نہ تو تعلیم حاصل کر سکتے ہیں اور نہ ہی زندگی کی جدوجہد میں آگے بڑھ سکتے ہیں۔ چھوٹی عمر میں منشیات کے استعمال سے انہیں چھوڑنا اور بھی مشکل ہو جاتا ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ صرف اے این ایف منشیات کی روک تھام نہیں کر سکتی، پولیس اور قانون نافذ کرنے والے ادارے جرائم سے اکیلے نہیں نمٹ سکتے، پورے معاشرے کو مل کر منشیات، جرم اور کرپشن سے لڑنا ہے۔ صرف نیب یا دوسرے ادارے بہتری نہیں لا سکتے۔ کوئی بھی معاشرہ جرائم، منشیات اور کرپشن سے اجتماعی کوششوں کے ذریعے کہ قابو پا سکتا ہے۔ انہوں نے سنگاپور اور امریکا کی مثال دی جہاں کرپشن کو برداشت نہیں کیا جاتا اور معاشرہ اسے قبول نہیں کرتا۔

وزیراعظم نے معاشرے پر زور دیا کہ منشیات اور کرپشن کے خلاف مل کر لڑیں۔ حکومت تمام متعلقہ وزارتوں پر مشتمل کونسل تشکیل دے گی تاکہ صحت، تعلیم سمیت مختلف وزارتیں معاشرے کو منشیات سے پاک کرنے اور نوجوان نسل کو بچانے کے لئے اپنا اپنا کردار ادا کریں۔

وزیرِ اعظم عمران خان اے این ایف ہیڈ کوارٹرز میں یادگارِ شہدا پر حاضری دے رہے ہیں (فوٹو: پی آئی ڈی)

وزیراعظم نے یقین دلایا کہ وسائل کو مد نظر رکھتے ہوئے اے این ایف میں نفری کی تعداد بڑھانے کے لئے تمام ضروری اقدامات کئے جائیں گے اور متعلقہ وزارتوں کو بھی متحرک کیا جائے گا۔ منشیات کے خلاف ملک بھر میں تحریک چلے اور مل کر اس سے لڑیں گے۔

اس موقع پر وفاقی وزیر انسداد منشیات اعظم سواتی، ڈی جی اے این ایف اور متعلقہ حکام بھی موجود تھے۔ قبل ازیں وزیرِ اعظم عمران خان نے اینٹی نارکوٹکس (انسدادِ منشیات ) فورس کے ہیڈ کوارٹرز کی نئی عمارت کا افتتاح کیا اور یادگارِ شہدا پر چادر بھی چڑھائی۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here