ایف بی آر مسلسل تیسرے ماہ ٹیکس ہدف حاصل کرنے میں ناکام

اکتوبر میں ٹیکس ہدف 352 ارب روپے تھا مگر ایف بی آر صرف 335 ارب روپے ہی اکٹھے کر سکا تاہم مالی سال کے پہلے چار ماہ میں ہدف سے زائد محصولات اکٹھے کیے گئے ہیں

297

اسلام آباد:  فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) اکتوبر میں بھی اپنا ریونیو ہدف حاصل کرنے میں کامیاب نہیں ہو سکا، ایسا مسلسل تیسرے ماہ دیکھنے میں آیا ہے۔

ذرائع کے مطابق اکتوبر میں ٹیکس ہدف 352 ارب روپے تھا مگر ایف بی آر صرف 335 ارب روپے ہی اکٹھے کرسکا، ٹیکس کلیکشن کے لیے ذمہ دار ادارہ ستمبرمیں بھی اپنا ہدف پورا کرنے میں ناکام رہا تھا اور اسے  10 ارب روپے کے شارٹ فال کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

یہ بھی پڑھیے: ایف بی آر تحقیقات میں دو شوگر ملز کی اربوں روپے کی بے نامی ٹرانزیکشنز بے نقاب

تاہم اگر رواں مالی سال ( 2020-21ء) کے پہلے چار ماہ کی بات کی جائے تو ایف بی آر نے نہ صرف اس عرصے کے لیے اپنا ہدف پورا کر لیا ہے بلکہ مقررہ ہدف سے زائد ٹیکس اکٹھا کیا ہے۔

اس عرصے میں اسے ایک ہزار 321 ارب روپے اکٹھے کرنا تھے مگر اس  نے ہدف سے 21  ارب روپے زائد یعنی ایک ہزار  342 ارب روپے اکٹھے کیے۔

یہ بھی پڑھیے: پنجاب ریونیو اتھارٹی، ایک ماہ میں زیادہ ٹیکس جمع کرنے کا ریکارڈ بنا دیا

واضح رہے کہ حکومت نے رواں برس ریونیو  ہدف 4 ہزار 963 ارب روپے رکھا ہے مگر  آئی ایم ایف  نے رواں برس ٹیکس آمدن ہدف سے تین سو ارب روپے کم رہنے کی پیشگوئی کی تھی۔ ۔

اُدھر ایف بی آر نے ٹیکس ریٹرنز جمع کروانے کی آخری تاریخ 8 دسمبر 2020ء مقرر کرتے ہوئے اس میں توسیع نہ کرنے کا اعلان کیا ہے۔،ادارے کا کہنا ہے کہ عوام کی سہولت کے لیے اس نے سادہ  ٹیکس ریٹرن فارم جاری کر دیا ہے۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here