سوشل میڈیا پر پابندی لگے گی یا نہیں؟ وزیر اعظم نے واضح کر دیا

264

لاہور: گزشتہ دنوں سپریم کورٹ کے ایک معزز جج کی جانب سے پاکستان میں یوٹیوب پر پابندی لگانے کا عندیہ دینے کے بعد سے یہ بحث جاری ہے کہ حکومت ملک میں سوشل میڈیا کو مستقل بند کرنے  کا سوچ رہی ہے۔ 

تاہم اب وزیر اعظم عمران خان یہ کہہ کر صورت حال واضح کر دی ہے کہ حکومت کسی بھی سوشل میڈیا ایپلیکیشن پر پابندی عائد نہیں کرے گی۔

لیکن اس کے ساتھ وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے  کہ کسی شہری کو کسی دوسرے کی توہین یا حکومتی اداروں اور اس کے ساتھ منسلک ملازمین کے خلاف غلط معلومات کے پھیلاؤ کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

یہ بھی پڑھیے:

امریکا میں سوشل میڈیا کمپنیوں کو ڈالنے کی کوشش، ٹرمپ کا نیا ایگزیکٹو آرڈر کیا ہے؟

دو نوجوانوں کی خودکشی کے بعد پاکستان میں ویڈیو گیم ’پب جی‘ پر عارضی پابندی عائد

گوگل میڈیا گروپس کو مواد استعمال کرنے کے بدلے ادائیگی کرے گا

عمران خان نے پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی اور وزارتِ انفارمیشن ٹیکنالوجی کی طرف سے سوشل میڈیا ریگولیشنز کی تیاری میں تاخیر کا نوٹس لیتے ہوئے متعلقہ محکموں کو اس حوالے سے آئندہ ہفتے رپورٹ جمع کرانے کا بھی حکم دیا ہے۔

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی حکومت کو سوشل میڈیا کے مواد کو ریگولیٹ اور مانیٹر کرنے کے فیصلے کے خلاف شدید تنقید کا سامنا ہے۔

حکومت کی جانب سے آن لائن گیم پب جی پر عارضی طور پر اور ٹک ٹاک پر پابندی کے عندیے کے بعد سے سوشل میڈیا صارفین حکومت کو شدید تنقید کا نشانہ بنا رہے ہیں۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here