سٹیٹ بینک نے 5 کھرب 92 ارب 74 کروڑ سے زائد کے قرضے ایک سال کیلئے موخر کر دئیے

122

اسلام آباد: کورونا وائرس کی وباء سے نمٹنے کی کوششوں کے ضمن میں سٹیٹ بنک آف پاکستان (ایس بی پی) کے قرضہ موخر و ری شیڈول کرنے کی سکیم کے تحت اب تک پانچ کھرب 92 ارب 74 کروڑ 80 لاکھ روپے مالیت کے قرضے ایک سال کیلئے موخرکردیے گئے۔

سٹیٹ بنک کی جانب سے اس حوالہ سے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق اصل زر کی ادائیگی ایک سال کیلئے موخرکرنے کی سکیم کے تحت تین جولائی 2020ء تک سٹیٹ بنک کو 12 لاکھ ، 22 ہزار 732 درخواستیں موصول ہوئی جن کے ذمہ واجب الادا قرضہ کا حجم 23 کھرب 22 ارب 99 کروڑ 70 لاکھ روپے ہیں۔

ان میں سے11 لاکھ 31 ہزار 60 درخواستوں کی منظوری دی گئی ہے اور کھرب 92 ارب 74 کروڑ 80 لاکھ روپے مالیت کے قرضوں کو ایک سال تک کیلئے موخرکیا گیا۔

اسی طرح اس سکیم کے تحت ایک کھرب 12 ارب 82  کروڑ 30 لاکھ روپے سے زائد کے قرضوں کی ری سٹرکچرنگ/ ری شیڈولنگ کی منظوری دی گئی ہے۔

اس سکیم کے تحت صارف قرض کا اصل زر ایک سال موخر کرنے کی مشروط اجازت دے دی گئی ہے۔ یہ سہولت ان صارفین کےلئے ہیں جن کی ادائیگی 31 دسمبر تک باقاعدہ ہوں ہو۔

قرض ادائیگی موخر کرنے پر بینک کوئی فیس یا سود چارج نہیں کریں گے، بینکس اس دوران صرف سود یا منافع کی وصولی کر سکیں گے جو صارفین سود یا منافع کی رقم ادا نہ کرسکیں وہ ری سٹرکچر کی درخواست کرسکتے ہیں۔ قرضوں کو موخر یا ری شیڈول کرنے سے کریڈٹ ہسٹری متاثر نہیں ہوگی۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here