کورونا مزید 20 زندگیاں نگل گیا، ہلاکتیں 301، کیسز کی تعداد 14 ہزار سے زائد

مہلک کو وِڈ 19 نے دنیا بھر میں 30 لاکھ 64 ہزار سے زائد انسانوں کو لپیٹ میں لے لیا، 2 لاکھ 11 ہزار 609 افراد ہلاک ہو چکے

170

لاہور: پاکستان میں کورونا وائرس سے گزشتہ چوبیس گھنٹوں کے دوران مزید 20 افراد جان کی بازی ہار گئے جس کے بعد ہلاکتوں کی مجموعی تعداد 301 ہو گئی ہے جبکہ مزید کیسز سامنے آنے کے بعد متاثرہ افراد کی تعداد 14079 ہو گئی ہے، وائرس کا شکار ہونے والے 3233 افراد صحت یاب ہو کر گھروں کو لوٹ چکے ہیں جبکہ 10 ہزار 545 افراد مختلف ہسپتالوں میں زیرعلاج ہیں۔

کورونا وائرس کے اعدادوشمار کیلئے بنائے گئے سرکاری پورٹل کے مطابق ملک میں جاں بحق ہونے والے 301 افراد میں سے خیبرپختونخوا میں سب سے زیادہ 104، سندھ میں 85، پنجاب میں 91، بلوچستان میں 14، گلگت بلتستان میں تین اور وفاقی دارالحکومت اسلام آباد چار ہلاکتیں ہوچکی ہیں۔

گورنر سندھ عمران اسماعیل بھی کورونا کا شکار

پاکستان تحریک انصاف سے تعلق رکھنے والے گورنر سندھ عمران اسماعیل نے سوشل میڈیا پر اپنا کورونا ٹیسٹ مثبت آنے کی تصدیق کی ہے۔

ترجمان پی ٹی آئی جمال صدیقی کے مطابق گورنرسندھ نےگزشتہ روز اپنا ٹیسٹ کرایا تھا۔ اپنے بیان میں گورنر سندھ نے کہا کہ ‘عمران خان نے ہمیں مشکلات سے لڑنا سکھایا ہے، انشا اللہ ہم اس وبا سےلڑیں گے،  میں نے خودکو آئسولیٹ کرلیاہے، مجھے گزشتہ رات ہی خود کو قرنطینہ کرلینا چاہیے تھا، لیکن آج صبح کیا’۔

 گورنرسندھ نے مزید کہا کہ ‘جن لوگوں سے میری ملا قاتیں رہیں ان کو بتادیا ہے، اہلخانہ کے ٹیسٹ بھی کرارہا ہوں، عوام سے دعاؤں کی اپیل ہے، طبیعت بہتر ہے کوئی پریشانی نہیں ہے’۔

لیگی سینیٹر مرزا محمد آفریدی کا کورونا ٹیسٹ بھی مثبت آ گیا

مسلم لیگ (ن) کے سینیٹر مرزا محمد آفریدی کا کورونا وائرس کا ٹیسٹ مثبت آگیا جس کے بعد وہ آئیسولیشن میں چلے گئے۔

یہ بھی پڑھیے: 

گرمی سے کورونا وائرس کے ختم ہونے کی بات میں کتنی سچائی ہے؟

موڈیز نے معیشت سکڑنے سے پاکستان میں کساد بازاری کا خدشہ ظاہر کردیا

کورونا وائرس، لاک ڈائون سے پاکستان میں کساد بازاری کا خدشہ

کورونا کے باعث بقا کی جنگ لڑتی کاٹن جننگ انڈسٹری نے حکومت سے مدد مانگ لی

ایشیائی ترقیاتی بینک کورونا سے ہونے والے معاشی نقصانات سے نمٹنے کیلئے پاکستان کو ایک ارب 70 کروڑ ڈالر دے گا

اس حوالے سے سینیٹر کا کہنا تھا کہ خیبرپختونخوا کے دورے کے دوران راشن کی تقسیم میں ان کا لوگوں سے میل جول ہوا تھا۔

انہوں نے کہا کہ وہ بہتر محسوس کر رہے ہیں تاہم انہوں نے اپنے رابطے میں آنے والوں کو بھی ٹیسٹ کروانے پر زور دیا۔

 معاشی حالات کے باعث سندھ کابینہ کے ارکان نے جون2020تک تنخواہیں نہ لینے کا متفقہ فیصلہ کرلیا۔

سندھ کابینہ ارکان کے فیصلے سے متعلق ترجمان سندھ حکومت بیرسٹر مرتضیٰ وہاب نے ٹوئٹ کیا کہ کروناوائرس کے پیش نظر معاشی مشکلات درپیش ہیں۔

انہوں نے موجودہ معاشی حالات کے باعث اراکین نے تنخواہیں نہ لینے کا فیصلہ کیا، صوبائی وزرا اور مشیران نے فیصلہ وزیراعلیٰ کی زیرصدارت اجلاس میں کیا۔

صوبائی کابینہ اور ارکان سندھ اسمبلی 1ماہ کی تنخواہ پہلے ہی کورونا ایمرجنسی فنڈ میں دے چکے ہیں۔

پاکستان میں کورونا کب ختم ہو گا؟

سنگاپور یونیورسٹی آف ٹیکنالوجی اینڈ ڈیزائن نے پیشگوئی کی ہے کہ پاکستان میں کورونا وائرس پر 8 جون تک 97 فیصد جبکہ یکم ستمبر تک 100 فیصد قابو پالیا جائے گا۔

یونیورسٹی کے مطابق عالمی سطح پر کورونا پر 29 مئی تک 97 فیصد قابو پایا جاسکتا ہے جبکہ یہ شرح 17 جون تک 99 فیصد اور 9 دسمبر تک 100 فیصد تک پہنچے گی جبکہ امریکا میں 11 مئی تک 97 فیصد اور 27 اگست تک وبا پر 100 فیصد کنٹرول ممکن ہے۔

سنگاپور یونیورسٹی آف ٹیکنالوجی اینڈ ڈیزائن کے مطابق دیگر ممالک میں کورونا کے خاتمے سے متعلق کہا کہ اٹلی میں 7 مئی، سپین میں 3 مئی، جرمنی میں 2 مئی ، فرانس میں 5 مئی ، سعودی عرب میں 21 مئی ، متحدہ عرب امارات میں 11 مئی ، ایران میں 19 مئی اور بھارت میں 21 مئی تک 97 فیصد اس وبا پر قابو پایا جاسکتا ہے۔

کورونا کے مریضوں کا دوران علاج خون جم جانے کا انکشاف

انتہائی نگہداشت کے وارڈ (آئی سی یو) میں داخل کورونا کے مریضوں کے خون جمنے کا انکشاف ہوا ہے اور اس مسئلے کو ماہرین صحت انتہائی خطرناک قرار دے رہے ہیں، کیوں کہ خون جمنے کی صورت میں متاثرہ شخص میں فالج، برین ہیمبرج یا دل کے دورے کے امکانات بڑھ جاتے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق چین و یورپ کے متعدد ممالک سمیت امریکا میں انتہائی نگہداشت کے وارڈ میں داخل مریضوں میں بلڈ کلاٹ جمع ہونے میں حیران کن طور پر اضافہ دیکھا گیا۔

بلڈ کلاٹ دراصل خون جم جانے کو کہتے ہیں، انسانی خون میں انتہائی چھوٹے لوتھڑے یا جیلی کی طرح کے دانے بننے لگتے ہیں جس کے بعد انسانی خون نسوں میں روانی برقرار نہیں رکھ سکتا۔

عالمی صورت حال

مہلک کو وِڈ 19 کی عالمگیر وبا نے 30 لاکھ 64 ہزار سے زائد انسانوں کو لپیٹ میں لے لیا ہے جبکہ وائرس میں مبتلا ہو کر اب تک 2 لاکھ 11 ہزار 609 افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

امریکا سب سے زیادہ متاثرہ ملک ہے جہاں اموات کی شرح بہت زیادہ ہے۔ گزشتہ چوبیس گھنٹوں کے دوران امریکا میں 1400 اموات ہوئیں، جس سے امریکا میں کرونا ہلاکتوں کی تعداد 56,803 ہو گئی ہے، جب کہ 10 لاکھ 10 ہزار سے زائد افراد وائرس کا شکار ہو چکے ہیں۔

امریکا میں گزشتہ چوبیس گھنٹوں کے دوران مزید 23 ہزار کیسز سامنے آئے۔ کووِڈ 19 سے متاثر ایک لاکھ 39 ہزار مریض صحت یاب ہو چکے ہیں تاہم اب بھی 14 ہزار سے زائد مریضوں کی حالت تشویش ناک ہے۔

امریکا میں نیویارک شہر سب سے زیادہ متاثر ہوا جہاں 22,623 ہلاکتیں ہوئیں اور 2 لاکھ 98 ہزار سے زائد لوگ متاثر ہوئے۔

یہ بھی پڑھیے: 

کورونا کا معاشی قہر، عالمی کاروباری برادری نے طویل کساد بازاری کی پیشگوئی کردی

عالمی تجارت میں 32 فیصد کمی متوقع، ترقی پذیر معیشتوں سے 100 ارب ڈالر کا انخلاء

عالمی معیشت کو چار کھرب ڈالر سے زائد کا نقصان ہو سکتا ہے: اے ڈی بی

کورونا وائرس ، کساد بازاری سے ایشیاء میں ایک کروڑسے زائد لوگ خط غربت سے نیچے چلے جائیں گے: رپورٹ

اٹلی دوسرا ملک ہے جہاں وائرس سے امریکا کے بعد سب سے زیادہ ہلاکتیں ہوئیں، اب تک یہ وائرس اٹلی میں 26,977 انسانوں کی جانیں لے چکا ہے، اور 1 لاکھ 99 ہزار سے زائد لوگ وائرس سے متاثر ہوئے، جن میں سے 66 ہزار مریض صحت یاب ہوئے، اور 2 ہزار مریضوں کی حالت اب بھی تشویش ناک ہے۔ تاہم اٹلی میں اب کورونا کی وبا خاصی حد تک تھم گئی ہے، اموات میں نمایاں کمی ہو چکی ہے جس کے باعث لاک ڈاؤن میں‌ نرمی کا اعلان بھی کیا گیا ہے۔

سپین اور فرانس بھی شدید متاثرہ ممالک میں سر فہرست ہیں، اسپین میں ہلاکتیں 23,521 ہو چکی ہیں اور مجموعی کیسز کی تعداد 2 لاکھ 29 ہزار سے زائد ہو گئی ہیں۔ فرانس میں 23,293 افراد وائرس کا شکار ہو کر مرچکے ہیں جب کہ کیسز کی تعداد 1 لاکھ 65 ہزار سے زائد ہو چکی ہے۔

برطانیہ بھی شدید متاثرہ ممالک میں سے ایک ہے، جہاں گزشتہ چوبیس گھنٹوں کے دوران 360 مریض مر چکے ہیں، اور وائرس اب تک 21,092 افراد کی جانیں لے چکا ہے، متاثرہ افراد کی تعداد بھی 1 لاکھ 57 ہزار سے بڑھ گئی ہے، برطانیہ نے تاحال صحت یاب ہونے والے مریضوں کا ڈیٹا جاری نہیں کیا ہے، تاہم بتایا جا رہا ہے کہ برطانیہ میں کرونا کے مریضوں کی صحت یابی کا گراف نہایت کم ہے۔

بیلجیئم میں 7,207 مریض، جرمنی میں وائرس سے 6,126 مریض، ایران میں 5,806 مریض، چین میں 4,633 (گزشتہ چوبیس گھنٹوں میں کوئی ہلاکت نہیں)، نیدرلینڈز میں 4,518 افراد، برازیل میں 4,603، ترکی میں 2,900، کینیڈا میں 2,707، سوئیڈن میں 2,274، سوئٹزرلینڈ میں 1,665، میکسیکو میں 1,434، آئرلینڈ میں 1,102، اور انڈیا میں 939 کرونا مریض ہلاک ہو چکے ہیں۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here