ملکی معیشت و صنعت کی بقا کے لیے روپے کی قدر مستحکم کرنے کا مطالبہ

187

اسلام آباد: ایوان صنعت و تجارت اسلام آباد کے صدر محمد احمد وحید نے حکومت پر ایکسچینج ریٹ کو مستحکم کرنے پر زور دیا ہے تاکہ ملک کے کاروباری اداروں اور معیشت کو مدد حاصل ہو سکے۔

انہوں نے سرکاری خبر رساں ادارے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ کرنسی میں گراوٹ آنے کی بنیادی وجہ مارکیٹ سے ڈالرز کا کم ہونا ہے کیوں کہ لوگوں نے ڈالرز خریدنے کے لیے سٹاک مارکیٹ سے اپنی سرمایہ کاری نکال لی ہے۔

مزید پڑھیں: سرمایہ کاروں کے 180 ملین روپے کے ٹریثری بلز واپس کرنے سے روپے کی قدر میں کمی

ان کا کہنا تھا کہ کچھ صنعتیں تو مینوفیکچرنگ سرگرمیوں کے لیے اپنا 70 فی صد خام مال درآمد کر رہی ہیں اور ڈالر کی قدر میں اضافے کے باعث پیداواری لاگت مزید بڑھے گی جس کے باعث صنعت اور برآمدات عالمی منڈی میں مقابلہ نہیں کر سکیں گی۔ انہوں نے مزید کہا کہ کورونا وائرس کے باعث تجارتی اور صنعتی سرگرمیاں پہلے ہی برے طریقے سے متاثر ہو رہی ہیں اور ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر میں مزید کمی کے باعث کاروباری سرگرمیوں کی بقا مکمل طور پر خطرات کا شکار ہو جائے گی۔

انہوں نے سٹیٹ بنک آف پاکستان کے گورنر سے ان حالات میں نوٹس لینے اور فی الفور اقدامات کرنے کا مطالبہ کیا تاکہ ملکی معیشت کو بچانے کے لیے روپے کی قدر میں استحکام پیدا کیا جا سکے۔

مزید پڑھیں: سینٹ کمیٹی کا روپے کی قدر میں کمی پر نوٹس، تحقیقات کیلئے ایف آئی اے کو خط

اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر نے کہا کہ ملک کی 25 فی صد آبادی خطِ غربت سے نیچے زندگی بسر کر رہی ہے اور اگر لاک ڈائون کی موجودہ صورتِ حال جاری رہتی ہے تو لاکھوں لوگوں کی ملازمت خطرات کا شکار ہو جائے گی۔

محمد احمد وحید نے کہا کہ مقامی کاروباری ادارے اور تاجر کمیونٹی موجودہ حکومت کے ملکی معیشت کی نمو کے لیے کیے گئے اقدامات کی مکمل حمایت کرتی ہے۔ وزیراعظم عمران خان نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 15 روپے فی لیٹر کمی کا اعلان کر کے عوام کو ریلیف فراہم کیا ہے۔ مزید برآں، ہم حکومت کی جانب سے کورونا وائرس کے موجودہ چیلنج سے مقابلہ کرنے کے لیے اختیار کی گئی حکمتِ عملی کی بھی مکمل حمایت کرتے ہیں۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here