وزیر اعظم کی پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کیلئے جامع حکمت عملی اختیار کرنے کی ہدایت

جامع منصوبہ بندی کا فقدان ماضی کے حکمرانوں کی نااہلی کا منہ بولتا ثبوت ہے، انتظامی غفلت کی قیمت عوام کے ہر طبقے نے چکائی : عمران خان  

185

اسلام آباد: وزیرِ اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پٹرولیم مصنوعات کے حوالے سے جامع منصوبہ بندی کا فقدان ماضی کے حکمرانوں کی نااہلی کا منہ بولتا ثبوت ہے، ملکی ضروریات اور شرح نمو کو مد نظر رکھتے ہوئے جامع منصوبہ بندی اور حکمت عملی اختیار کی جائے اور تمام متعلقہ محکموں کے باہمی اشتراک کو فوقیت دی جائے تاکہ ترسیل و متفرق اخراجات میں ممکنہ حد تک کمی لا کر عوام کو ممکنہ ریلیف فراہم کیا جا سکے۔

انہوں نے ان خیالات کا اظہار پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کے تعین میں کارفرما عوامل، موجودہ طریقہ کار اور اس حوالے سے ایک منظم اور جامع حکمت عملی کے تحت قیمتوں میں کمی لانے کے حوالے سے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔

 اجلاس میں وزیر توانائی عمر ایوب، وزیر منصوبہ بندی اسد عمر ، معاون خصوصی برائے پٹرولیم ندیم بابر و سینئر افسران نے شرکت کی، اجلاس میں وزیرِ اعظم کو پٹرولیم مصنوعات کی درآمد اور انکی قیمتوں پر کارفرما ہونے والے مختلف عوامل اور اخراجات کے حوالے سے تفصیلی بریفنگ دی گئی۔

یہ بھی پڑھیں:

’2020ء نوکریاں دینے کا سال‘ وزیر اعظم عمران خان کا یہ بیان کتنا حقیقت پر مبنی ہے؟

پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کے باوجود ماہانہ 25 ارب عوام کی جیبوں سے نکالنے کا حکومتی منصوبہ

ناقص حکومتی پالیسیاں اور کرنسی کی گراوٹ کیسے پاکستان میں پٹرولیم کی دوسری بڑی کمپنی کو زوال سے دوچار کررہی ہیں

بریفنگ کے دوران وزیرِ اعظم کو بتایا گیا کہ پٹرولیم مصنوعات کی طلب و رسد کے حوالے سے ماضی کی حکومتوں کی جانب سے نہ تو مناسب حکمت عملی اختیار کی گئی اور نہ ہی ترسیل اور دیگر متفرق اخراجات کو کم کرنے کے حوالے سے کوئی مناسب اقدامات کیے گئے جس کے نتیجے میں پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ اور عوام پر اضافی بوجھ پڑتا رہا ہے۔

وزیرِ اعظم نے اس امر پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ماضی کی حکومتوں کی جانب سے انتظامی سطح پر برتی جانے والی اس مجرمانہ غفلت کی قیمت عوام کے ہر طبقے نے چکائی ہے۔

وزیرِ اعظم نے کہا کہ پٹرولیم مصنوعات کے حوالے سے ملکی مجموعی ضروریات کوپورا کرنے کے لئے وقتی اور قلیل مدتی انتظامات کو ترجیح دینا اور اس ضمن میں جامع منصوبہ بندی کا فقدان دراصل ماضی کے حکمرانوں کی نااہلی کا منہ بولتا ثبوت ہے۔

وزیرِ اعظم نے ہدایت کی کہ ملکی ضروریات اور شرح نمو کو مد نظر رکھتے ہوئے مستقبل کی ضروریات کو پورا کرنے کے لئے تمام متعلقہ محکموں کی باہمی کوآرڈینیشن سے جامع منصوبہ بندی اور حکمت عملی اختیار کی جائے تاکہ ترسیل و متفرق اخراجات میں ممکنہ حد تک کمی لائی جا سکے اور عوام کو ممکنہ ریلیف فراہم کیا جا سکے۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here