بجلی  کے اضافی بلوں کیخلاف اپٹما کا ملک گیر ہڑتال کا اعلان، کل وزیر اعظم سے ملاقات میں تحفظات پیش کرینگے

99

لاہور:  آل پاکستان ٹیکسٹائل ملز ایسوسی ایشن (اپٹما) اور حکومت کے درمیان  بجلی کے بلوں کا تنازع شدت اختیار کر گیا جس پر اپٹما نے ملک بھر میں احتجاجاََ ٹیکسٹائل فیکٹریاں بند کرنے کااعلان کردیا ہے۔

سوموار کو لاہور ہائیکورٹ کی جانب سے ٹیکسٹائل ایکسپورٹرز کو کسی قسم کا ریلیف فراہم نہیں کیا  جس کے بعد ٹیکسٹائل ملز مالکان نے بجلی کے یکمشت بھجوائے گئے بقایاجات ادا کرنے سے انکار کر دیا ہے۔

 اپٹما رہنماؤں کا کہنا ہے کہ حکومت کو کو آگاہ کردیا ہے کہ پنجاب سمیت ملک بھر کی ملیں جلد بند کردی جائیں گی۔

اپٹما کے مطابق 12 ماہ کے بقایا جات بل یکمشت بھجوا دیئے گئے ہیں، کروڑوں روپے کے اضافی بل ادا نہیں کر سکتے، یہ وزارت توانائی و پٹرولیم کا ظلم ہے، ان حالات میں ملیں نہیں چل سکتیں، اس سے دس لاکھ مزدور بے روز گار ہو جائیں گے ۔

واضح رہے کہ بجلی کے بلوں میں اضافی سرچارجزکی وصولی کی بنا پر تمام ملوں کو 40 فی صد اضافی بل بھیج دیے گئے ہیں اور فی یونٹ قیمت 12 کے بجائے 20 روپے وصول کی جا رہی ہے۔ٹیکسٹائل ملز مالکان کی جانب سے اضافی ٹیرف کو مسترد کردیا گیا ہے۔

دوسری جانب  باوثوق ذرائع نے بتایا  ہے کہ ملز مالکان اپٹما کے گروپ لیڈر گوہر اعجاز کی زیر قیادت بدھ کو وزیر اعظم عمران خان سے ملاقات کرکے بجلی کے اضافی ٹیرف کے حوالے سے اپنے تحفظات پیش کریں گے۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here