پاکستانی نژاد برطانوی وزیر خزانہ ساجد جاوید مستعفی، بھارتی نژاد رشی سونک کو تعینات کردیا گیا

142

لندن: برطانیہ کے پاکستانی نژاد وزیرخزانہ ساجد جاوید اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے جبکہ انکی جگہ بھارتی نژاد رشی سونک کو برطانیہ کا نیا وزیر خزانہ بنایا گیا ہے۔ 

برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق مستعفی وزیر خزانہ ساجد جاوید نے وزیراعظم بورس جانسن کو ایک خط میں کہا ہے کہ وہ اپنے خاندان اور  حلقے میں ووٹرز کو زیادہ سے زیادہ وقت دینا چاہتے ہیں۔

ساجد جاوید نے بورس جانسن اور ان کی کابینہ کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ وہ پارلیمنٹ میں پچھلی نشستوں پر بیٹھ کر بھی حکومت کی مکمل مدد کریں گے۔

برطانوی میڈیا کے مطابق ساجد جاوید کی جگہ  بھارتی نژاد رشی سوناک کو نیا وزیر خزانہ مقرر کیا گیا ہے جو اس سے قبل چیف سیکرٹری خزانہ (نائب وزیر) کی حیثیت سے کام کررہے تھے۔

اطلاعات کے مطابق ساجد جاوید کے استعفیٰ کی وجہ وزیر اعظم بورس جانسن کی جانب اپنے تمام مشیروں کو برخاست کرنے سے انکار ہے۔

برطانوی میڈیا میں یہ بھی کہا جارہا ہے کہ ساجد جاوید نے وزیراعظم بورس جانسن کے مشیر سے اختلاف کی وجہ سے استعفیٰ دیا ہے۔ اس کے علاوہ بورس جانسن کی جانب سے کابینہ میں مزید تبدیلیاں بھی کی گئی ہیں۔

رشی سونک کون ہیں؟

سُونک 2015 سے برطانیہ میں یارکشائر کے رچمنڈ علاقے سے برسراقتدار کنزرویٹو پارٹی کے رکن پارلیمان ہیں۔ وہ برطانیہ کے شہر نارتھلیرٹن کے نواح میں کربی سگسٹن میں رہتے ہیں۔

برطانیہ کے نئے وزیر خزانہ رشی سونک

ان کے والد ایک ڈاکٹر اور والدہ فارمیسسٹ تھیں۔ ان کے بھارتی نژاد والدین مشرقی افریقہ سے برطانیہ آئے تھے۔

1980ء میں ہیمشائر کے علاقہ سائوتھ ہیمپٹن میں پیدا ہونے والے رشی کے والد ڈاکٹر اور ماں فارماسسٹ تھیں اور وہ مشرقی افریقہ سے آئے تھے۔

رشی نے ابتدائی تعلیم ایک پرائیویٹ سکول وِنچیسٹر کالج سے حاصل کی،  آکسفورڈ یونیورسٹی سے پولیٹکل سائنس اور اکنامکس اور سٹینفورڈ یونیورسٹی سے ایم بی اے کیا۔

سیاست میں قدم رکھنے سے پہلے انہوں نے انویسٹمنٹ بینک گولڈمین سیکس میں کام کیا اور خود کی ایک انویسٹمنٹ فرم بھی قائم کی۔

رشی سونک نے اپنے انتخابی حلقے میں بریگزٹ کے حق میں مہم چلائی تھی اور ان کے حلقے میں 55 فیصد لوگوں نے یورپی یونین چھوڑنے کے حق میں ووٹ ڈالا تھا۔

انہوں نے سابق وزیر اعظم ٹریزا مے کے بریگزٹ معاہدوں کے حق میں تین بار ووٹ دیا اور وہ بورس جانسن کے شروع سے ہی حمایتی رہے ہیں۔

جولائی 2019 میں وزیر اعظم بورس جانسن نے سُونک کو وزارت خزانہ کا چیف سیکریٹری منتخب کیا تھا۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here