ہواوے کو 5G نیٹ ورک پر کام کی اجازت دینے سے پہلے صورتحال کا محتاط انداز میں جائزہ لینا چاہیے، برطانوی وزیر خارجہ

238

برطانیہ کے وزیر خارجہ جیریمی ہنٹ نے ملک کے اندر فائیو جی نیٹ ورک کے حوالے سے چینی کمپنی ہواوے کے کردار پر محتاط رہنے کامشورہ دیا ہے ، ان کا کہنا ہے کہ حکومت کو اس ٹیکنالوجی کمپنی کو فائیوجی موبائل نیٹ ورک کی ترقی کے لیے اجازت دینے سے پہلے صورتحال کا محتاط انداز میں جائزہ لینا چاہیے۔
برطانوی اخبار ٹیلی گراف کے مطابق برطانوی وزیر خارجہ کا بیان ایسے وقت سامنے آیا ہے جب گزشتہ ہفتے وزیر اعظم تھریسا مے نے چینی کمپنی ہواوے کو ملک میں فائیوجی نیٹ ورک کی تنصیب کے لیے مشروط اجازت دی تھی۔کمپنی کو بعض مغربی ممالک میں سخت رد عمل کا سامنا ہے، ان کا موقف ہے کہ چین اس کمپنی کے ذریعے ان کے کمیونیکیشن نظام کی جاسوسی کرکے حساس مقامات تک رسائی حاصل کرسکتا ہے۔
جیریمی ہنٹ نے کہا کہ ہم بڑی چینی کمپنیوں کے حوالے سے احتیاط کے نظریے پر حق بجانب ہیں کیونکہ ان کمپنیوں پر چینی حکومت کا موثر کنٹرول ہے جو انھیں اس طرح کے کاموں پر مجبور کرسکتا ہے، تاہم ان کے مقابلے میں بڑی مغربی کمپنیاں حائل ہوں تو پھر ان کے لیے اس طرح کے اقدامات ممکن نہیں۔ان کا کہنا تھا کہ ہمارا یہ ہرگز مطلب نہیں کہ یہ کمپنیاں بذات خود نقصان دہ ہیں تاہم 2017 ء کا قانون بالکل واضح ہے جس کے تحت تمام چینی کمپنیاں جو کسی کی بھی ملکیت ہوں، وہ کسی بھی وقت چینی انٹیلی جنس کے ساتھ تعاون کی پابند ہیں، ظاہر ہے جب ہم فیصلے کریں گے تو ہمیں اس طرح کی صورتحال کا محتاط انداز میں جائزہ لینا ضروری ہے۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here