درآمدات میں3ارب 50کروڑ ڈالر کی کمی ہوئی، مشیر تجارت

30

مشیر وزیر اعظم برائے صنعت و تجارت عبدالرزاق داؤد کا کہنا تھا نئےمعاہدے کے تحت چین نے 313 اشیا کو اپنی منڈی تک رسائی دی، موجودہ حکومت نےتجارتی خسارے میں نمایاں کمی کی، یکم جولائی سےاب تک درآمدات میں3ارب 50کروڑ ڈالر کی کمی ہوئی، جون تک تجارتی خسارے میں 5ارب ڈالرتک کمی ہوگی۔
مشیر تجارت نے قومی اسمبلی میں بتایا کہ پاک چین آزادانہ تجارتی معاہدے سے پاکستانی برآمدات میں 50کروڑ ڈالر تک کا اضافہ متوقع ہے، ایف ٹی اے فیزٹو پردستخط رواں ماہ کےاختتام میں ہوں گے۔
چین کے ساتھ آزادانہ تجارتی معاہدے کے بعد پاکستان چین کو چاول، کاٹن یارن اورچینی برآمد کی، پاکستان نےاب تک چین کو ڈیڑھ لاکھ ٹن چینی ، چاول اورکاٹن یارن برآمد کیں، مجموعی طور پر پاکستان کی 313 مصنوعات کو ڈیوٹی فری رسائی حاصل ہوئی ہے۔
مارکیٹ رسائی کے پیکج کی مالیت ایک ارب ڈالر ہے، مصنوعات میں پلاسٹک، آٹو پارٹس، کیمیکلز، ربڑ مصنوعات،گوشت، سرجیکل آلات، سی فوڈ اور دیگر شامل ہیں۔
پاک چین آزادانہ تجارتی معاہدے کے فیز ٹو پر 28 اپریل کو دستخط ہوں گے، اعدادوشمار کے مطابق پاکستان کاچین سے تجارتی خسارے کا حجم 15 ارب ڈالر ہے۔
یاد رہے چند روز قبل بھی مشیر تجارت عبد الرزاق داؤد کا کہنا تھا پاکستان نے چین کو ڈیوٹی فری رسائی دینے کامطالبہ مسترد کردیا ہے، چین پاکستان کو 313اشیا پرڈیوٹی فری رسائی دے گا۔
مشیر تجارت نے کہا امریکا نے پاکستان کوڈیوٹی فری رسائی دینے کا مطالبہ مسترد کر دیا، ٹرمپ انتظامیہ کے بعد ڈیوٹی فری رسائی کی کوشش کریں گے، پاکستانی ٹیکسٹائل مصنوعات کو ترکی برآمد کرنے میں مشکلات کاسامنا ہے۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here