سعودی عرب : 5G کے اجراء کا معاہدہ، 19ارب ڈالر کی سرمایہ کاری

318

ریاض: سعودی مواصلاتی کمپنی (ایس ٹی سی) اور سویڈن کی ایریکسن کمپنی نے سعودی عرب میں فائیو جی نیٹ ورک بچھانے کا معاہدہ کر لیا۔ دونو ںکمپنیوں نے یہ شراکت سعودی ویژن 2030کے اہداف کی تکمیل کیلئے کی ہے۔ سعودی عرب اپنے یہاں کام کی ضرورتیں تیزی کے ساتھ پوری کرنے کیلئے عالمی سطح پر اہم تکنیکی مرکز بننے کے لئے کوشاں ہے۔ مملکت نے مذکورہ معاہدہ فائیو جی نیٹ ورک بچھانے والے اولین ممالک میں شامل ہونے کیلئے بھی کیا ہے۔ یہ ڈیجیٹل تبدیلی کی جہت میں اہم قدم ثابت ہوگا۔ اس کی بدولت سعودی عرب کے تمام شعبے ترقی یافتہ ٹیکنالوجی سے مربوط ہو جائیں گے۔ 2030ء تک سعودی منڈی کا حجم 35ارب ڈالر تک پہنچ جائے گا۔ اس سے صارفین اور سرمایہ کاروں کے شعبے فیضیا ب ہوں گے۔ وزیر مواصلات عبداللہ السواحہ نے بتایا کہ موبائل خدمات کیلئے ویوز سے 1000میگا ہرٹ سے کہیں زیادہ کی رفتار فائیو جی کی بدولت حاصل ہو گی۔ فائیو جی نیٹ ورک بچھانے کا فیصلہ اسپین میں موبائل ورلڈ کانگریس میں سعودی عرب کی شرکت کے موقع پر کیا گیا۔ یہ مواصلات کے شعبے کے ماہرین اور عہدیداروں کا سب سے بڑا اجتماع مانا جاتا ہے۔ سعودی عرب کو اس سے بہت سارے فائدے ہوں گے۔ مشرق وسطیٰ میں اس سے ٹیکنالوجی کو موثر کرنے والا پہلا ملک سعودی عرب ہوگا۔ اس سے روبوٹ، اسمارٹ سٹیزاور انٹرنیٹ پر منحصر ترقی یافتہ ٹیکنالوجی کے دروازے کھلیں گے۔ الخبر کو 2018ء کے دوران مشرق وسطیٰ میں G-5نیٹ ورک آزمانے والے پہلے شہر کا اعزاز حاصل ہوا۔ توقع ہے کہ مملکت میں انٹرنیٹ سے چلنے والی ساڑھے 4 کروڑ مصنوعات اس کی بدولت تیز رفتار ہوں گی۔ جس سے 2030تک 12ارب ڈالر سے زیادہ قیمت کی مارکیٹ بنے گی۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here