کراچی: رہائشی عمارتوں کے کمرشل استعمال پر مکمل پابندی

126

عدالت عظمیٰ نے کراچی میں رہائشی عمارتوں کے کمرشل استعمال پر مکمل پابندی لگاتے ہوئے ایس بی سی اے کو کمرشل عمارتوں کی این او سی جاری کرنے سے روک دیا۔
سپریم کورٹ کراچی رجسٹری میں جسٹس گلزار احمد اور جسٹس سجاد علی شاہ پر مشتمل 2 رکنی بینچ نے شہر میں غیر قانونی شادی ہالز، شاپنگ مالز اور پلازوں کی تعمیرات سے متعلق کیس کی سماعت کی۔ سماعت کے دوران جسٹس گلزار احمد نے جام صادق پارک سے تجاوزات 4 ہفتوں میں ختم کرنے کا حکم دیا اور ریمارکس دیے کہ شہر میں ہر قسم کی تجاوزات فوری گرائی جائیں۔
جسٹس گلزار احمد نے یہ بھی حکم دیا کہ جو عمارت اصل ماسٹر پلان سے متصادم ہے اسے گرا دیں جبکہ پارک، کھیل کے میدان اور اسپتالوں کی اراضی واگزار کرائی جائے۔
عدالت نے این او سی ادارہ تحفظ ماحولیات سے مشروط کرنے کا حکم بھی دیا۔
جسٹس گلزار احمد نے ڈی جی ایس بی سی اے پر شدید برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ کیا اس شہر کو وفاق یا سندھ حکومت کے ماتحت کر دیں؟ ان سے شہر نہیں چلتا تو سندھ حکومت شہر کو ٹیک اوور کرلے۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here