پالیسی کے مطابق معلومات کی فراہمی میں ناکامی، فرانس نے گوگل پر 5 کروڑ یورو کا جرمانہ عائد کردیا

257

فرانسیسی خبر رساں ادارے کے مطابق فرانس کے مانٹیرنگ کے ادارے کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ یورپین یونین کے جنرل ڈیٹا پروٹیکشن ریگولیشن (جی ڈی پی آر) کے تحت پہلی مرتبہ گوگل پر 5 کروڑ یورو کا جرمانہ عائد کر دیا ہے۔
بیان کے مطابق فرانسیسی ادارے سی این آئی ایل نے دستاویزات کے حوالے سے باہمی پالیسی کے تحت معلومات تک واضح اور آسان رسائی دینے میں ناکامی پر پر جرمانہ عائد کیا ہے۔

سی ایل آئی ایل کا کہنا تھا کہ گوگل نے صارفین کے لیے ان کی ذاتی معلومات کے استعمال کے مطابق ترجیحات ترتیب دینے اور خاص کر اشتہارات کے معاملے میں انتہائی مشکل بنا دیا تھا۔
گوگل کے ترجمان نے اپنے بیان میں کہا کہ ‘عوام ہم سے کنٹرول اور شفافیت کے اعلیٰ معیار کی توقع رکھتے ہیں اور ہم ان توقعات پر پورا اترنے کے لیے پرعزم ہیں اور جی ڈی پی آر کی ضروریات پوری کریں گے’۔
گوگل کا کہنا تھا کہ ‘ہم اگلے اپنے لائحہ عمل کے لیے فیصلے کا جائزہ لے رہے ہیں’۔
خیال رہے کہ یہ شکایات گزشتہ برس مئی میں دو گروپس کی جانب سے جی ڈی پی آر کے نافذ ہونے کے فوری بعد درج کرادی گئی تھیں۔
فرانس کے کواڈریچر نیٹ گروپ کی جانب سے درج کی گئی ایک شکایت میں 10 ہزار افراد کے دستخط تھے جبکہ دوسری شکایت آسٹریا کی تنظیم میکس شریمز کے نون آف یور بزنس نامی گروپ کی تھی۔
آسٹرین گروپ نے گوگل کے خلاف شکایت میں کہا تھا کہ ان کے اینڈرائیڈ سے اپنے ایپ یا آن لائن سروس کے ذریعے معلومات چوری کی گئی ہیں کیونکہ وہ ایپ اس وقت تک فعال نہیں ہوتی جب تک ان کی شرائط کو قبول نہیں کیا جاتا۔
سی این آئی ایل کا کہنا تھا کہ ‘اس کے باوجود جو معلومات فراہم بھی کی گئی تھیں وہ واضح نہیں تھی کہ اس سے کچھ حاصل کیا جائے’۔
آسٹرین گروپ کا کہنا تھا کہ ‘ہم نے گوگل جیسی بڑی کمپنیوں کو مختلف انداز میں قانون کی تشریح کرتے پایا ہے’۔
خیال رہے کہ جی ڈی پی آر کو ویب کی تاریخ میں سخت ترین قانون قرار دیا جارہا ہے جو ان کمپنیوں پر بھی نافذ العمل ہوتا ہے جو یورپین یونین کی حدود میں سرگرم ہو چاہے وہ رکن ممالک سے تعلق نہ رکھتی ہوں۔
اسی قانون کے تحت فرانس کے ادارے سی این آئی ایل نے گوگل کو ایک سال میں نئے قوانین پر عمل کرتے ہوئے نہیں پایا اور نہ ہی کوئی تبدیلی دیکھی گئی۔
ان کا کہنا تھا کہ 5 کروڑ یورو کے ریکارڈ جرمانے سے یہ بات واضح ہوتی ہے کہ گوگل کی قوانین پر عمل در آمد میں ناکامی کس قدر سنجیدہ ہے۔
سی این آئی ایل کا کہنا تھا کہ ‘روانہ ہزاروں فرانسیسی صارفین اپنے اسمارٹ فون میں گوگل کا اکاؤنٹ بناتے ہیں جس کے نتیجے میں کمپنی کی ذمہ داری میں اضافہ ہوتا’۔
یاد رہے کہ گوگل کو 2014 میں بھی اسی طرح کے الزامات میں ڈیڑھ لاکھ یورو کا جرمانہ ادا کرنا پڑا تھا اور 2016 میں ایک لاکھ یورو جرمانہ ہوا تھا۔

2 تبصرہ

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here