باسمتی چاول کے بعد گلابی نمک کو بھی رجسٹرڈ کرنے کا فیصلہ

445

اسلام آباد: باسمتی چاول کی جیوگرافیکل انڈیکیشن (جی آئی) رجسٹریشن کے بعد پاکستان نے گلابی نمک کی بھی رجسٹریشن کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

یورپین یونین میں پاکستان پہلے سے بھارت کے خلاف باسمتی چاول کے جی آئی ٹیگ سے متعلق کیس لڑ رہا ہے اور اب خدشہ ہے کہ بھارت باسمتی چاول کی طرح گلابی نمک کو بھی ہمالین سالٹ کے نام سے اپنی پراڈکٹ کے طور پر رجسٹرڈ کروا سکتا ہے۔

وزارتِ تجارت کے حکام نے انٹیلیکچوئل پراپرٹی آرگنائزیشن (آئی پی او) پاکستان کے نمائندوں کے ساتھ ایک اجلاس منعقد کیا جہاں یہ فیصلہ کیا گیا کہ حکومت جیوگرافیکل انڈیکیشنز ایکٹ 2020ء کے تحت گلابی نمک کو بھی رجسٹرڈ کرائے گی۔

وزیراعظم کے مشیر برائے تجارت و سرمایہ کاری عبدالرزاق داؤد کی زیرِصدارت ہونے والے اجلاس میں چئیرمین آئی پی او مجیب احمد خان نے بھی شرکت کی۔

یہ بھی پڑھیے:

رواں مالی سال کے پہلے چھ ماہ میں باسمتی چاول کی برآمدات میں 38 فیصد کمی

کاروباری برادری کا باسمتی چاول کی طرح دیگر مصنوعات کو بھی جیوگرافیکل انڈیکیشن ٹیگ دینے کا مطالبہ

اجلاس کے دوران حکام نے جی آئی ٹیگ کی رجسٹریشن کیلئے ممکنہ مصنوعات پر غور کیا تاکہ دوسرے ممالک میں پاکستانی مصنوعات کے غیرمجاز استعمال پر قابو پایا جائے۔

میشر تجارت نے کہا کہ چاول کی رجسٹریشن کے بعد فیصلہ کیا ہے کہ پاکستان کے نمک کے ذخائر سے گلابی نمک کو جی آئی کے طور پر رجسٹرڈ کرایا جائے گا، یہ اقدام نمک کے کاروبار سے وابستہ افراد کو ان کا بزنس عالمی سطح تک وسیع کرنے کیلئے حوصلہ افزائی کرے گا۔

انہوں نے کہا کہ اس مقصد کیلئے وفاقی کابینہ کی منظوری کے ساتھ ایک رجسٹرار مقرر کیا جائے گا، اسی کے ساتھ دیگر مصنوعات کی تریجیحی بنیادوں پر جی آئی رجسٹریشن کیلئے کارروائی بھی شروع کی جائے گی”۔

انہوں نے کاروباری برادری سے مصنوعات کی نشاندہی کی درخواست کی جنہیں عالمی استحصال سے محفوظ رکھنے کے پیش نظر جی آئی کے طور پر رجسٹرڈ کرایا جا سکے۔

رزاق داؤد نے مختلف مصنوعات کی جی آئی رجسٹریشن کی اہمیت کو دہراتے ہوئے کہا کہ مصنوعات کی رجسٹریشن پاکستان کی قومی و بین الاقوامی تجارت بڑھانے کے لیے ایک ممکنہ معاشی ہتھیار کے طور پر کام کرے گی۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here