بھٹوں کو زِگ زیگ ٹیکنالوجی پر منتقلی کیلئے بلا سود قرضوں کا اعلان

قرضہ سکیم کو حتمی شکل دی گئی، فی بھٹہ 20 لاکھ روپے تک بلا سود قرضہ ملے گا، قرض کی واپسی دو سال میں ہوگی

89

لاہور: پنجاب حکومت نے بھٹہ خشت کے ذریعے پھیلنے والی فضائی آلودگی میں کمی کیلئے بھٹوں کو زگ زیگ ٹیکنالوجی پر منتقلی کیلئے قرضہ سکیم کا اعلان کر دیا۔

صوبائی وزیر صنعت و تجارت میاں اسلم اقبال کی زیر صدارت پنجاب سرمایہ کاری بورڈ کا اجلاس ہوا جس میں اینٹوں کے بھٹوں کو زگ زیگ ٹیکنالوجی پر منتقلی کے لئے بلا سود قرضوں کی فراہمی کی سکیم کو حتمی شکل دی گئی۔

سکیم کے تحت جدید ٹیکنالوجی پر منتقلی کے لئے فی بھٹہ 20 لاکھ روپے تک کا بلاسود قرضہ دیا جائے گا، قرض پر صرف دو فی صد آپریشنل چارج وصول کیا جائے گا جبکہ بھٹے کی زگ زیگ ٹیکنالوجی پر منتقلی کا عمل تین ماہ میں مکمل کرنا ہو گا۔

قرضے کی واپسی دو سال میں ہوگی، قرضے کی فراہمی کے لئے ضلع کی سطح پر کمیٹیاں بنیں گی، ان کمیٹیوں میں محکمہ صنعت و تجارت، محکمہ تحفظ ماحولیات اور برکس کلن اونرزایسوسی ایشن کے نمائندے شامل ہونگے۔

جو بھٹے جدید ٹیکنالوجی پر منتقل ہو چکے انہیں بھی بلاسود قرضے کی سہولت ملے گی۔

صوبائی وزیرنے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ ماحول کو آلودگی سے پاک کرنے کیلئے بھٹوں کی زگ زیگ ٹیکنالوجی پر منتقلی ضروری ہے، بھٹوں کو جدید ٹیکنالوجی پر منتقل کرنے کیلئے پنجاب سمال انڈسٹریز کارپوریشن بلاسود قرضوں کی سکیم لارہا ہے۔ مرحلہ وار پروگرام کے تحت صوبے بھر کے بھٹوں کو زگ زیگ ٹیکنالوجی پر منتقل کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ پہلے مرحلے میں 11 اضلاع لاہور، راولپنڈی گوجرانوالہ، گجرات، فیصل آباد، ملتان، شیخوپورہ، اوکاڑہ، جہلم، ساہیوال اور قصورکے بھٹوں کو جدید ٹیکنالوجی پر منتقل کیا جائے گا۔

صوبائی وزیر نے کہا کہ بھٹوں کی زگ زیگ ٹیکنالوجی پر منتقلی کے لئے قرضوں کی سکیم وزیر اعظم کے صاف اور سرسبز پاکستان کے ویژن کی جانب اہم قدم ہے نئی نسل کو صاف ستھرے ماحول کی فراہمی ہمارا عزم ہے۔ بھٹوں کی جدید ٹیکنالوجی پرمنتقلی کیلئے ہر ممکن سہولت دیں گے۔

صدر برکس کلن اونر ایسوسی ایشن محمد شعیب خان نیازی، ایم ڈی پیسک مدثر ریاض ملک، ڈی جی محکمہ تحفظ ماحولیات اشعر زیدی اور متعلقہ افسران نے اجلاس میں شرکت کی۔

جواب چھوڑیں

Please enter your comment!
Please enter your name here